297

صد ر مسلم لیگ (ن) کی نیب میں پیشی۔۔!! پہلے تحقیقاتی ٹیم سے نوک جھوک جاری رہی مگر۔۔ پھر اعلیٰ افسر نے آ کر شہباز شریف کے کان میں کیا کہا کہ وہ مسکرا اُٹھے؟ تہلکہ خیز انکشاف

لاہور (نیوز ڈیسک ) سابق وزیراعلیٰ پنجاب اور اپوزیشن لیڈر شہبازشریف نیب میں پیشی کے بعد اب واپس روانہ ہو چکے ہیں تاہم دوران سوالات تحقیقاتی ٹیم کے ایک رکن سے معمولی نوک جھوک بھی ہوئی ۔نیب نے شہبازشریف کو 2 جون کو دوبارہ طلب کر لیا ہے ۔ذرائع کا کہناہے کہ شہبازشریف آمدن سے زائد اثاثوں کی تفصیلات دیکھ کر حیران رہ گئے ، ان سے پانچ مشکوک ٹرانزیکشنز کے بارے میں پوچھا گیا لیکن وہ جواب دینے میں ناکام رہے۔باوثوق ذرائع نے دعویٰ کیا ہے کہ سابق وزیراعظم نوازشریف نے شہبازشریف سے ٹیلیفونک رابطہ کیا جس کے بعد وہ نیب میں پیش ہونے کیلئے آمادہ ہوئے تاہم اب وہ پیشی کے بعد ماڈل ٹاﺅن میں واقع اپنے گھر واپسی کیلئے روانہ ہو چکے ہیں ۔ ذرائع کا کہناہے کہ کچھ دیر قبل نیب کی تحقیقاتی ٹیم کے ایک رکن کے ساتھ معمولی نوک جھوک بھی ہوئی ۔ذرائع نے بتایا کہ سابق وزیراعلیٰ پنجاب شہبازشریف پیشی کے موقع پر شروع میں سخت پریشان تھے تاہم ایک اعلیٰ افسر نے آکر ان کے کان میں کچھ کہا جس پر ان کے چہرے پر مسکراہٹ آ گئی ۔ نیب ٹیم کی جانب سے پہلے سخت سوالوں کی بوچھاڑ کی گئی لیکن جیسے ہی افسر نے کانوں میں سرگوشی کی اس کے بعد سوالوں کی صورتحال میں بھی نرمی واقع ہوئی لیکن دو گھنٹے تک خوب بحث و مباحثہ کا منظر رہا ۔ذرائع نیب کا کہناہے کہ شہبازشریف اپنے جوابات سے مطمئن نہیں کر سکے ہیں۔ذرائع کا کہناہے کہ شہبازشریف آمدن سے زائد اثاثوں کی تفصیلات دیکھ کر حیران رہ گئے ، ان سے پانچ مشکوک ٹرانزیکشنز کے بارے میں پوچھا گیا تو وہ حیران رہ گئے اور جواب دینے میں ناکام رہے۔ذرائع نے بتایا کہ شہباز شریف نے تقریبا تفتیش دو گھنٹے تک جاری رہی اور وہ اس دوران انویسٹی گیشن ٹیم کو مطمئن نہیں کرپائے ۔ نیب نے شہبازشریف کو دو جون کو دوبارہ طلب کر لیا ہے ۔شہبازشریف کی نیب پیشی کے حوالے سے ن لیگ کی ترجمان مریم اورنگزیب کا بھی بیان سامنے آیا ہے جس میں ان کا کہناتھا کہ نیب کی جانب سے دوران تفتیش منی لانڈرنگ کا کوئی سوال ہی نہیں کیا گیا ہے ۔اس سے قبل جب شہبازشریف نیب کے دفتر میں پیش ہونے کیلئے پہنچے تو وہاں پر ن لیگی کارکنان کی بڑی تعداد موجود تھی جنہوں نے اپنے لیڈر کا بھر پور استقبال کیا جبکہ حکومت اور نیب کے خلاف نعرے بازی بھی سننے میں آئی ۔یاد رہے کہ سابق وزیراعظم نوازشریف ضمانت پر اس وقت لندن میں زیر علاج ہیں جہاں ان کے ہمراہ شہبازشریف بھی موجود تھے تاہم لمبا عرصہ قیام کر نے کے بعد کورونا کے پھیلاﺅ کو سامنے رکھتے ہوئے وہ وطن واپس آئے اور انہوں نے سیاست میں بھی کردار شروع کیا ۔

Source : HassanNissar

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں