326

امریکہ تباہی کے دہانے پر مگر۔۔۔ ڈونلڈ ٹرمپ کی بیٹی ایوانکا ٹرمپ رنگ رلیاں منانے کہاں پہنچ گئیں؟ امریکی عوام سمیت پوری دُنیا تنقید کرنے لگی

واشنگٹن( نیوز ڈیسک) ایک طرف پورہ امریکہ تباہی کے دہانے پر مگر دوسری جانب امریکہ صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی بیٹی اورانکی مشیر خاص رنگ رلیاں منانے نیو جرسی پہنچ گئیں ہیں جسکی وائٹ ہاؤس کی جانب سے بھی تصدیق کر دی گئی ہے۔ تفصیلات کے مطابق عوام کو گھروں میں رہنے اور احتیاط کی تلقین کرتے ہوئے
امریکی صدر ٹرمپ کی بیٹی ایوانکا اور داماد جئیرڈ کشنر Passover تہوار پر واشنگٹن ڈی سی میں اپنے گھر سے نیو جرسی میں ٹرمپ خاندان کی ریزورٹ جا پہنچے۔وائٹ ہاؤس نے سفر کی تصدیق کرتے ہوئے وضاحت کی ہے کہ ایوانکا نے بند کی گئی سیرگاہ پر خاندان کے ساتھ تہوار منایا، ایوانکا کا سفر اپنے کام سے آنے جانے والے سفر سے مختلف نہیں تھا اور وہ مقام بھی واشنگٹن ڈی سی میں ان کے گھر کے آس پڑوس سے زیادہ گنجان آباد نہیں تھا۔وائٹ ہاؤس نے مزید وضاحت دیتے ہوئے کہا ہے کہ ان کا سفر کمرشل نہیں تھا، انہوں نے چھٹیاں خاندان کے ساتھ گزارنے کا فیصلہ کیا۔چین سے پھیلنے والے جان لیوا وائرس نے امریکہ میں ہزاروں جانیں نگلنے کیساتھ ساتھ 2 کروڑ 20 لاکھ افراد کو بیروزگار بھی کردیا ہے، ہر سات میں سے ایک امریکی شہری بیروزگار ہے۔برطانوی نشریاتی ادارے کے مطابق امریکہ میں سب سے زیادہ کم از کم چھ لاکھ 40 ہزار متاثرین کی تصدیق ہو چکی ہے جبکہ وہاں ہلاکتوں کی تعداد 30500 سے زیادہ ہے،امریکہ میں مارچ کے وسط سے اب تک 2 کروڑ 10 لاکھ سے زیادہ افراد بیروزگار ہوچکے ہیں۔خیال رہے کہ دنیا بھر میں کورونا وائرس سے متاثر ہونے والے افراد کی تعداد 21 لاکھ سے تجاوز کر گئی ہے جبکہ ایک لاکھ 44 ہزار سےزیادہ لوگ ہلاک ہو چکے ہیں۔برطانیہ بھی ایک لاکھ سے زائد مریضوں والا چھٹا ملک بن گیا ہے، 24 گھنٹے میں مزید 861 مریضوں کا انتقال ہو گیا جب کہ اموات کی مجموعی تعداد 12ہزار سے زائد ہوگئی۔ فرانس سے میں گزشتہ 24 گھنٹے کے دوران مزید 753 ہلاکتیں ہوئی ہیں جس کے بعد ہلاکتوں کی مجموعی تعداد 17ہزار 920 ہوگئی ہے۔اٹلی میں اب تک 22 ہزار سے زائد افراد وائرس کے باعث ہلاک ہوچکے ہیں، اسپین میں مزید 503 افراد کورونا وائرس سے زندگی کی بازی ہارگئے جب کہ بیلجیم میں بھی 17 اموات ہوئی ہیں، چین میں کورونا سے ہلاک ہونے والوں کی تعداد کئی ہفتے 3300 کے قریب رکی رہی تاہم گزشتہ روز اچانک اموات کی تعداد 4600 تک پہنچ گئی، اس کی وجہ ووہان میں لاک ڈاون ختم ہونے کے بعد اموات میں اضافہ ہے۔
Source Hassan.Nisar

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں