285

ڈاؤ یونیورسٹی کی گارڈز کی طالبہ کیساتھ بدسلوکی،فیس کے تنازع پر بالوں سے گھسیٹ کر باہر نکال دیا ،طالبات رات مسجد میں گزارنے پر مجبور،ویڈیو وائرل

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک) ڈاؤ یونیورسٹی میں خواتین کالج کی طالبہ سے بدسلوکی،ویڈیو سوشل میڈیا پر وائرل ۔وائرل ویڈیو میں گارڈز کو طالبہ کے بال گھسیٹتے ہوئے دیکھا گیا ہے۔طالبہ کو ہاسٹل میں رہائش کا مسئلہ درپیش تھا،طالبہ چار روز سے چکر لگا رہی تھی۔ ویڈیو میں یہ بھی دیکھا جا سکتا ہے کہ طالبہ فیس کے مسئلہ پر بات کرنا چاہتی تھی۔جب گارڈ طالبہ کو بالوں سے کھینچ کر گھسیٹ رہی تھیں تو ویڈیو میں دیکھا جا سکتا تھا کہ طالبہ چیخ چیخ کر وہاں سے نہ جانے کی دہائیاں دیتی نظر آئیں۔لیکن ہاسٹل کی خواتین گارڈ نے انتظامیہ کے حکم

کی تعمیل کرتے ہوئے طالبہ کو بے رحمی سے زبردستی گھسیٹتے ہوئے رات گئے ہاسٹل سے نکال دیا،طالبات نے رات ہاسٹل سے متصل مسجد میں گزاری۔دوسر ی جانب ڈاؤ یونیورسٹی آف ہیلتھ سائنسزکے وائس چانسلر پروفیسر محمد سعید قریشی نےمعاملے کی تحقیقات کیلئے انکوائری کمیٹی قائم کردی ہے جس نے کام کا آغاز کردیا ہے اور چوبیس گھنٹے میں رپورٹ پیش کریگی۔ڈاؤ یونیورسٹی کے ترجمان نےایک اعلامیے میں بتایا ہے کہ ہائرایجوکیشن کمیشن کی جانب سے کووڈ نائنٹین کے حفاظتی اقدامات اور ایس اوپیز کی تعمیل میں نمام ہاسٹل خالی کرائے جانے کی ہدایات کےبعدتمام مقامی طالبات کو ہاسٹل خالی کرنے کی ہدایت کی گئی تھی۔ یونیورسٹی میں تمام قواعد کے مطابق ایمپلائز سندھ کے ڈومیسائل پر بھرتی کیے گئے ہیں ،یونیورسٹی ملازمین کی بھرتیوں میں قواعد کونظرانداز کرنے کی باتیں بے بنیاد ہیں ،واقعے کی انکوائری مکمل ہوتے ہی میڈیاکو آگاہ کیا جائیگا۔

Source : Javedch

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں