277

ﺁﭨﮫ ﺳﻮ ﺳﺎﻝ ﺳﮯ ﯾﮧ ﭘﯿﺮ ﻣﺒﺎﺭﮎ، ﺍﺳﯽ ﻃﺮﺡ ﻗﺒﺮ ﺳﮯ ﺑﺎﮨﺮ ﮬﮯ –

نقل۔۔۔۔۔۔۔۔
ﺣﻀﺮﺕ ﺍﯾﻮﺏ ﻃﺎﮨﺮ ﮐُﺮﺩﯼ ﺭﺣﻤﺘﮧ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ
ﯾﮧ ﻭﺍﻗﻌﮧ ، ﺁﭨﮫ ﺳﻮ ﺳﺎﻝ ﭘﮩﻠﮯ ﮐﺎ ﮬﮯ ﺍﻭﺭ ﯾﮧ ﻗﺒﺮ ﻣﺒﺎﺭﮎ ﺩﻣﺸﻖ ﻣﯿﮟ ﮬﮯ –
ﺑﺘﺎﯾﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮬﮯ ﮐﮧ ﻋﻠﻤﺎﺀ ﮐﮯ ﺩﻭ ﮔﺮﻭﮦ ﮐﺎ ﺁﭘﺲ ﻣﯿﮟ ﮐﺴﯽ ﻣﺴﺌﻠﮯ ﭘﺮ ﺍﺧﺘﻼﻑ ﮬﻮ ﮔﯿﺎ
ﺍﻭﺭ ﻭﮦ ﻓﯿﺼﻠﮯ ﮐﯿﻠﺌﮯ ﺣﻀﺮﺕ ﺍﯾﻮﺏ ﮐﺮﺩﯼ ﺭﺣﻤﺘﮧ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧﮐﯽ ﺧﺪﻣﺖ ﻣﯿﮟ ﺣﺎﺿﺮ ﮬﻮﺋﮯ –
ﮐﺮﺩﯼ ﺭﺣﻤﺘﮧ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﺻﺎﺣﺐ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﺑﺎﺭﮮ ﻣﯿﮟ ﮐﻞ ﺑﺘﺎﻭﮞ ﮔﺎ ،
ﺁﭖ ﻟﻮﮒ ﮐﻞ ﻣﯿﺮﮮ ﭘﺎﺱ ﺁﺋﯿﮟ –
ﻭﮦ ﻟﻮﮒ ﻟﻮﭦ ﮔﺌﮯ
ﺍﻭﺭ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﺩﻥ ﺣﺎﺿﺮ ﮬﻮﺋﮯ ﺗﻮ ﭘﺘﮧ ﭼﻼ ﮐﮧ ﺍﯾﻮﺏ ﮐﺮﺩﯼ ﺻﺎﺣﺐ ﺭﺣﻤﺘﮧ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﺭﺣﻠﺖ ﻓﺮﻣﺎ ﮔﺌﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﮐﯽ ﺗﻮ ﺗﺪﻓﯿﻦ ﺑﮭﯽ ﮬﻮ ﭼﮑﯽ ﮬﮯ –
ﺩﻭﻧﻮﮞ ﮔﺮﻭﮦ ﻗﺒﺮ ﭘﺮ ﻓﺎﺗﺤﮧ ﮐﯿﻠﺌﮯ ﭼﻠﮯ ﮔﺌﮯ –
ﻭﮨﺎﮞ ﺍﯾﮏ ﺷﺨﺺ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ –
ﺁﭖ ﻧﮯ ﺗﻮ ﻫﻤﺎﺭﮮ ﺩﺭﻣﯿﺎﻥ ﻓﯿﺼﻠﮧ ﮐﺮﻧﺎ ﺗﮭﺎ –
ﺍﺱ ﺁﻭﺍﺯ ﭘﺮ ﻗﺒﺮ ﺳﮯ ﭘﯿﺮ ﺑﺎﮨﺮ ﻧﮑﻞ ﺁﯾﺎ –
علماء کے درمیان مباحثہ نبی کریم صلی اللہ علیہ والہ و سلم کی رحلت کے بعد حیات کا تھا جس پر ولی اللہ نے بتایا کہ دیکھو جب غلام کی حیات کا یہ عالم ہے تو آقا کریم صلی اللہ علیہ والہ و سلم کیسے ہو گے.
ﺍﻭﺭ ﯾﮧ ﺍﻥ ﮐﮯ ﺳﻮﺍﻝ ﮐﺎ ﺟﻮﺍﺏ ﺗﮭﺎ –
ﺁﭨﮫ ﺳﻮ ﺳﺎﻝ ﺳﮯ ﯾﮧ ﭘﯿﺮ ﻣﺒﺎﺭﮎ، ﺍﺳﯽ ﻃﺮﺡ ﻗﺒﺮ ﺳﮯ ﺑﺎﮨﺮ ﮬﮯ –
ﺍﻭﺭ ﺍﺳﮑﮯ ﻧﺎﺧﻦ ﺑﮭﯽ ﺑﮍﮬﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺟﻮ ﮐﮧ ﻣﺤﮑﻤﮧ ﺍﻭﻗﺎﻑ ﮐﺎ ﻣﻼﺯﻡ ﮐﭽﮫ ﺩﻥ ﺑﻌﺪ ﺁﮐﺮ ﺗﺮﺍﺷﺘﮧ ﮨﮯ ..

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں